Saghar Siddiqui Poetry, Saghar Siddiqui Poetry in Urdu, Saghar Shayari ||| Saghar Siddiqui

Saghar Siddiqui born name is Muhammad Akhtar. He was a famous Poet from Pakistan. He was born in Ambala, India in 1928. He was from middle class family. He started poetry from his childhood. After Pakistan came into being he migrated from India to Pakistan. He was lived in Lahore in a cheap Hotels. He sold his Poetry to other for money. Many People publish his Poetry with their names. Saghar disappeared and started living in the streets. He was seen in Ankali Bazar. He was found dead in a street at the age of 46. He was died in 1974.

Saghar Siddiqui Poetry
Saghar Siddiqui Poetry

ہم نے جن کی لیے راہوں میں بچھایا تھا اپنا لہو 
آج کہتے ہیں وہی عہدِ وفا یاد نہیں 

Hum Na Jinke Liye Rahoon Ma Bechaya Tha Apna Lahoo 
Ajj Kehte Hain Wahi Ehd e Wafa Yaad Nahi

Saghar Siddiqui Poetry
Saghar Siddiqui Poetry

پوچھا کسی نے حال کسی کا تو رو دئیے 
پانی میں عکس چاند کا دیکھا تو رو دئیے 

Pocha Kisi Na Haal Kisi Ka Tu Roo Diye 
Pani Ma Ekhs Chand Ka Dekha Tu Ro Diye

Saghar Siddiqui Poetry
Saghar Siddiqui Poetry

آؤ اک سجدہ کریں عالمِ مد ہوشی میں 
لوگ کہتے ہیں کہ ساغرؔ کو خدا یاد نہیں 

Ao Ek Sajdah Krain Alam e Madhoshi Ma 
Log Kehte Hain Saghar Ko Khuda Yaad Nahi 

Saghar Siddiqui Poetry
Saghar Siddiqui Poetry

سو چتے ہیں حسرتوںح کے موڑ پر شام و سحر 
جائیں گے ساغرؔ کہاان کی گلی سے روٹھ کر 

Sochte Hain Husratoon Ke Moor Par Sham o Saher 
Jaye Ge Saghar Kahan Unki Gali Roath Kar

Saghar Siddiqui Poetry
Saghar Siddiqui Poetry

فقہِ شہر نے تہمت لگائی ساغرؔ پر 
یہ شخص درد کی دولت کو عام کرتا ہے 

Fika e Sher Na tuhmat Lagai Saghar Par 
Yeah Shaks Dard Ki Dolat Ko Aam karta Hai 

Saghar Siddiqui Poetry
Saghar Siddiqui Poetry

چھپائے دل میں غموں کا جہان بیٹھے ہیں 
تمہاری بزم میں ہم بے زبان بیٹھے ہیں 

Chupae Dil Ma Ghamoon Ka Jaan Baithe Hain 
Tumhari Bazam Ma Hum Be Zuban Baithe Hain 

Saghar Siddiqui Poetry
Saghar Siddiqui Poetry

کبھی تو آؤ کبھی تو بیٹھو کبھی تو دیکھو کبھی تو پوچھو 
تمہاری بستی میں ہم فقیروں کا حال کیوں سوگوار سا ہے 

Kabhi Tu Aoo Kabhi Tu Baitho Kabhi Tu Dekho Kabhi Tu Pocho
Tumhari Basti Ma Hum Fakiroon Ka Haal Kion Sogawar Sa Hai 

Saghar Siddiqui Poetry
Saghar Siddiqui Poetry

اسے نہ جیت سکے گا غمِ زمانہ اب 
جو کائنات ترے در پہ ہار دی ہم نے 

Uuse Na Jeet Sake Ga Zaman e Gham Ab 
Jo Kainat Tere Dar Pe Haar De Hum Na 

Saghar Siddiqui Poetry
Saghar Siddiqui Poetry

بس اتنی بات پر دشمن بنی ہے گردشِ دوراں 
خطا یہ ہے کہ چھڑا کیوں تری زلفوں کا افسانہ 

Bas Itni Si Baatr Par Dushman Bani Hai Gardash e Doran 
Khataah Yeah Hai Ke Chera Kion Teri Zulfoon Ka Afsaana 

Saghar Siddiqui Poetry
Saghar Siddiqui Poetry

میری دھڑکن کی گواہی تو مری حق میں نہیں 
ایک احساس سا رہتا ہے کہ ہوں زندہ ہوں 

Meri Dharkan Ki Gawai Tu Mere Haq Ma Nahi 
Aik Ehsaas Sa Rehta Hai Ke Hun Zinda Hun 

Saghar Siddiqui Poetry
Saghar Siddiqui Poetry

مجھے بھی رکھنا جب لکھو تاریخِ وفا ساغرؔ
کہ میں نے بھی لوٹایا ہے محبت میں سکون اپنا 

Mughe Bhe Rekhna Jab Likho Tareek e Wafa Saghar 
Ke Main Na Bhe Lotaya Hai Muhabbat Ma Sakoon Apna 

Saghar Siddiqui Poetry
Saghar Siddiqui Poetry

غرورِ مستی نے مار ڈالا وگرنہ ہم لوگ جی ہی لیتے 
کسی کی آنکھ کا نور ہو کر کسی کے دل کا قرار بن کر 

Gharoo e Masti Na Mar Dala Wagarna Hum Log Jee Hi Lete 
Kisi Ki Ankh Ka Noor Ho Kar Kisi Ke Dil Ka karara Ban Kar

Saghar Siddiqui Poetry
Saghar Siddiqui Poetry

حشر میں کون گواہی میری دے گا ساغرؔ
سب تمہارے ہی طلبگار نظر آتے ہیں 

Hashar Ma Kon Gawahi Meri De Ga Saghar 
Sab Tumhare Hi Talabgar Nazar Ate Hain 

Saghar Siddiqui Poetry
Saghar Siddiqui Poetry

دیوانہ بے خودی میں بڑی بات کہہ گیا 
اک حشر کی گھڑی کو ملاقات کہہ گیا 

Dewana Be Khudi Ma Bari Baat Keh Gaya 
Ek Hashar Ki Ghari Ko Mulakat Keh Gaya 

Saghar Siddiqui Poetry
Saghar Siddiqui Poetry

ہزاروں پھول کھلے اپنا قافلہ نہ روکا 
دلوں پہ داغ لیے ہم چمن سے گزرے ہیں 

Hazroon Phool Khaile Apna Kafilah Na Roka 
Diloon Pe Daag Liye Hum Chaman Se Guzare 

Saghar Siddiqui Poetry
Saghar Siddiqui Poetry

غمِ زندگی کہاں سے ہے ابھی وحشتوں سے فرصت 
تیرے ناز اٹھا ہی لیں گے ابھی زندگی پڑی ہے

Gham e Zindgi Kahan Se Hai Abhi Wahishtoon Se Fursat 
Tere Naaz Utha Hi Lain Ge Abhi Zindgi Pari Hai 


4 Lines Poetry of  Saghar Siddiqui:
 
ہم فقیروں کی صورت پر مت جانا 
ہم کئی روپ دھار لیتے ہیں 

زندگی کے اداس لمحوں کو 
مسکرا کر گزار لیتے ہیں 
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جب کسی صورت نہ عنواں مل سکا 
آرزو بے نام صحرا بن گئی 

زندگی کی بات ساغرؔ کیا کہیں 
اک تمنا تھی تقاضا بن گئی 
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دکھ بھری داستان ماضی کی 
حال کی بے رخی کا قصہ ہوں 

اے حقیقت کے ڈھونڈنے والے 
میں تری جستجو کا حصہ ہوں 
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ جن کے ہوتے ہیں خورشید آستینوں میں 
انہیں کہیں سے بلاؤ بڑا اندھیرا ہے 

فرازِ عرش سے ٹوٹا ہوا کوئی تارہ 
کہیں سے ڈھونڈ کے لاؤ بڑا اندھیرا ہے 
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Thanks for Your Love and Support