Ashk e Nadaan Se Kaho Baad Mein Pachtaengy ||| Khalil ur Rehman Qamar Ghazal

 

Ashk e Nadaan Se Kaho Baad Mein Pachtaengy
Khalil ur Rehman Qamar Ghazal

اشکِ ناداں سے کہو بعد میں پچھتائیں گے 
آپ گر کر میری آنکھوں سے کدھر جائیں گے 

اپنے لفظوں کو تکلم سے گر کا جاناں 
اپنے لہجے کی تھکاوٹ سے بھی ڈر جائیں گے 

اک تیرا گھر تھا میری حد مسافت لیکن 
ابھی سوچا ہے کہ ہم حد سے گزر جائیں گے 

اپنے افکار جلا ڈالیں گے کاغذ کاغذ 
سوچ مر جائے گی ہم آپ بھی مر جائیں گے 

اس سے پہلے کہ جدائی کی خبر تم سے ملے 
ہم نے سوچا ہے کہ ہم تم سے بچھڑ جائیں گے 
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Askh e Nadaan Se Kaho Baad Mein Pachtaengy
Ap Gir Kar Meri Ankhon Se Kidar Jayaen Ge 

Apne Lafzoon Ko Takalum Se Gira Kar Jana 
Apne Lehje Ki Thakawat Se Bhe Darr Jayaen Ge

Ek Tera Ghar Tha Meri Had e Musafat Lekin
Abhi Socha Hai Ke Hum Had Se Guzar Jayaen Ge 

Apne Afkaar Jala Dale Ge Kagaz Kagaz 
Soch Mar Jaye Gi Hum Ap Bhe Mar Jayaen Ge 

Is Se Pehle Ke Judai Ki Khabar Tum Se Mile 
Hum Na Socha Hai Ke Hum Tum Se Bechar Jayaen Ge
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Thanks For Your & Support