Main Apni Dosti Ko Sheher Mein ||| Ghazal

 

main apni dosti ko sheher mein
Ghazal

میں اپنی دوستی کو شہر میں رسوا نہیں کرتا
محبت بھی کرتا ہوں مگر چرچا نہیں کرتا

جو مجھ سے ملنے آجائے میں اُس کا دل سے خادم ہوں
جو اٹھ کے جانا چاہے میں اُسے روکا نہیں کرتا

جسے میں چھوڑ دیتا ہوں اُسے پھر بھول جاتا ہوں
پھر اُس ہستی کی جانب میں کبھی دیکھا نہیں کرتا

تیرا اصرار سر آنکھوں پر کہ تم کو بھول جاؤں میں
میں کوشش کر کے دیکھوں گا مگر وعدہ نہیں کرتا

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

Main Apni Dosti Ko Sheher Mein Ruswa Nahi Karta
Muhabbat Bhe Karta Hun Magar Charcha Nahi Karta

Jo Mugh Se Milne Aa Jaye Main Us Ka Dil Se Khadim Hun
Jo Uth Ke Jana Chahe Main Usse Roka Nahi Karta

Jese Main Chor Deta Hun Usse Phir Bhool Jata Hun
Phir Us Hasti Ki Janib Main Kabhi Dekha Nahi Karta

Tera Israar Ser Ankhon Par Ke Tum Ko Bhool Jaon Main
Main Koshish Kar Ke Dekho Ga Magar Wada Nahi Karta

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭