Bahut Roshan Hai Sham e Gham Humari Ghazal

 

Habib Jalib Ghazal

بہت روشن ہے شام غم ہماری
کسی کی یاد ہے ہمدم ہماری 

غلط ہے لاتعلق ہیں چمن میں
تمہارے پھول اور شبنم ہماری 

یہ پلکوں پر نئے آنسو نہیں ہیں
ازل سے آنکھ ہے پرنم ہماری

ہر ایک لب پر تبسم دیکھنے کی
تمنا کب ہوئی ہے کم ہماری 

کہی ہے ہم نے خود سے بھی بہت کم
نہ پوچھو داستان غم ہماری

Bahut Roshan Hai Sham e Gham Hamari
Kisi ki Yaad Hai Humdum Hamari

Ghalat Hai Lataluk Hain Chaman Mein
Tumhare Phool Aur Shabnam Hamari

Yeah Palkon Par Naye Ansoo Nahi Hain
Azal Se Ankh Hai Par Num Hamari

Har Aik Lab Par Tabushum Dekhne Ki
Tamanah Kab Hoi Hai Kam Hamari

Kahi Hai Hum Na Khud Se Bhe Bahut Kam
Na Pocho Dastan e Gham Hamari

***************