Kahin Aah Ban Ke Lab Par Tera Naam Na Aa Jaye ||| Ghazal

 

Kahin Ahh Ban Ke Lab Par Tera Naam Na Aa Jaye Tughe Be Bewafa Kaho Mein Who Mukaam Na Aa Jaye Zara Zulf Ko Shambhalo Mera Dil Dharak Raha Hai Koi Aur Taahir Dil The Daam Na Aa Jaye Jise Sun Ke Toot Jaye Mera Arzo Bhara Dil Tera Anjum Se Mughko Who Payam Na Aa Jaye
Ghazal

کہیں آہ بن کے لب پر تیرا نام آ نہ جائے
تجھے بے وفا کہوں میں وہ مقام آ نہ جائے

ذرا زلف کو سنبھالو میرا دل دھڑک رہا ہے
کوئی اور طائر دل میں تہہ دام آ نہ جائے

جسے سن کے ٹوٹ جائے میرا آرزو بھرا دل
تیری انجمن سے مجھ کو وہ پیام آ نہ جائے

وہ جو منزلوں پہ لا کر کسی ہمسفر کو لوٹیں
انہی رہزنوں میں تیرا کہیں نام آ نہ جائے

اسی فکر میں ہیں غلطان یہ نظام زر کے بندے
جو تمام زندگی ہے وہ نظام آنا جائے

یہ مہ و نجوم ہنس لیں میرے آنسوؤں پہ جالب
میرا ماہتاب جب تک لب بام آ نہ جائے

______________

Kahin Ahh Ban Ke Lab Par Tera Naam Na Aa Jaye
Tughe Bewafa Kaho Mein Woh Mukaam Na Aa Jaye

Zara Zulf Ko Sambhalo Mera Dil Dharak Raha Hai
Koi Aur Tayir Dil Teh e Daam Aa Na Jaye

Jis Sunke Toot Jaye Mera Arzo Bhara Dil
Teri Anjum Se Mugh Ko Woh Payam Aa Na Jaye

Woh Jo Munzalo Pe La Kar Kisi Hum Safar Ko Lotain
Unhain Rehzano Mein Tera Kahain Naam Na Aa Jaye

Ussi Fikar Mein Hain Ghultan Yeah Nizam Zar Ke Bande
Jo Tamaam Zindgi Hai Woh Nazam Aa Na Jaye

Yeah Meh o Najoom Hans Lain Mere Ansoon Pe Jalib
Mera Mehtab Jab Tak Lab Baam Aa Na Jaye

__________