Tum Se Pehle Woh Jo Ek Yahan Takht Naseen Tha

Ghazal

تم سے پہلے وہ جو اک شخص یہاں تخت نشیں تھا
اس کو بھی اپنے خدا ہونے پہ اتنا ہی یقین تھا

کوئی ٹھہرا ہو جو لوگوں کے مقابل تو بتاؤ
وہ کہاں ہیں کہ جنہیں ناز بہت اپنے تیئں تھا

آج سوئے ہیں تہ خاک نہ جانے یہاں کتنے
کوئی شعلہ کوئی شبنم کوئی مہتاب جبیں تھا

اب وہ پھرتے ہیں اسی شہر میں تنہا لیے دل کو
اک زمانے میں مزاج ان کا سر عرش بریں تھا

چھوڑنا گھر کا ہمیں یاد ہے جالب نہیں بھولے
تھا وطن ذہن میں اپنی کوئی زندان تو نہیں تھا

------

Tum Se Pehle Jo Ek Shaks Yahan Takht Naseen Tha
Usko Bhe Apne Khuda Hone Pe Bahut Yakeen Tha


Koi Thehra Ho Jo Logo Ke Mukabil Tu Batao
Woh Kahan Hain Ke Jinhain Naaz Bahut Apne Taeen Tha

Aj Soye Hain Teh e Khaak Na Jane Yahan Kitne
Koi Shola Koi Shabnam Koi Mehtaab Jabeen Tha

Ab Woh Phirte Hain Isi Shehar Mein Tanha Liye Dil Ko
Ek Zamane Mein Mazaj Unka Sar Arsh e Barren Tha

Chorna Ghar Ka Humain Yaad Hai Jalib Nahi Bhole
Tha Watan Zehan Mein Apni Koi Zindaan Tu Nahi Tha

------