Aatish Bahawalpuri Poetry

 Hi Guys! Excited to post Aatish Bahawalpuri Poetry. Hope You Like It.

زبان پے شکوۂ  بے مہرئ خدا کیوں ہے

دعا تو مانگیے آتش کبھی دعا کی طرح

Zuban Pay Shikwa-e-Bemar-e-Khuda Kyun Hai 

Dua to Mangiye Aatish Kabhi Dua Ki Tarah

***

یوں کسی سے اپنے غم کی داستان کہتا نہیں

پوچھتے ہیں وہ تو پھر مجبور ہو جاتا ہوں میں

Yun Kisi Se Apne Gham Ki Dastan Kahta Nahin

Puchte Hain Vah To Phir Majbur Ho Jata Hun Main

***

مجھ کو آتش بادہ و ساغر سے ہو کیا واسطہ

ان کی آنکھیں دیکھ کر مغمور ہو جاتا ہوں میں

Mujhko Aatish Badah o Sagar Se Ho Kya Wasta

Unki Aankhen Dekhkar Maghmor Ho Jata Hun Main

***

یہ ساری باتیں ہیں درحقیقت ہمارے خلاف کے منافی

سنیں برائی نہ ہم کسی کی نہ خود کسی کو برا کہیں ہم

Yah Sari Baten Hain Darhakikat Hamare Ikhlaq Khilaf Ke Munafi

Suni Burai Na Ham Kisi Ki Na Khud Kisi Ko Bura kahen Ham

***

مصلحت کا یہی تقاضا ہے

وہ نہ مانیں تو مان جاؤ تم

Masalehat Ka Yahi Taqaza Hai

Vah Na Mane To Maan Jao Tum

***

رواں دریا ہیں انسانی لہو کے

مگر پانی کی قلت ہوگئی ہے

Rawan Dariya Hai Insani Lahu Ke

Magar Pani Ki Killat Ho Gai Hai

***

خوگر لذت آزاد تھا اتنا آتش

درد بھی مانگا تو پہلے سے سوا مانگا تھا

Khogar Lazzat Azad Tha Itna Aatish

Dard Bhi Manga To Pahle Se Sava Manga Tha

***

اپنے چہرے سے جو زلفوں کو ہٹا یا اس نے

دیکھ لی شام نے تابندہ سحر کی صورت

Apne Chehre Se Jo Zulfon Ko Hataya Usne 

Dekh Li Sham Ne Ta-Binda Shahar Ki Surat

***

غم و الم بھی ہیں تم سے خوشی بھی تم سے ہے

نوائے سوز میں تم ہو صدائے ساز میں تم

Gham o Alam Bhi Hain Tumse Khushi Bhi Tumse Hai

Nawaye Shoz Mein Tum Ho Sadaye Saaz Mein Tum

***

یہ میخانہ ہے میخانہ تقدس اس کا لازم ہے

یہاں جو بھی قدم رکھنا ہمیشہ باوضو رکھنا

Yah Mai Khana Hai Mai Khana Taqadus Iska Lazim Hai 

Yahan Jo Bhi Kadam Rakhna Hamesha Ba-Wazu Rakhna

***

اس نئے دور کی تہذیب سے اللہ بچائے

مسخ ہوتی نظر آتی ہے بشر کی صورت

Is Naye Daur Ki Tahzib Se Allah Bachaye

Masak Hoti Nazar Aati Hai Basar Ki Surat

***

Thanks for Visiting

Post a Comment

0 Comments