Har Saans Hai Ek Naghma Har Naghma Hai Mastana ||| Ghazal

ہر سانس ہے اک نغمہ ہر نغمہ ہے مستانہ
کس درجہ دکھے دل کا رنگین ہے افسانہ

جو کچھ تھا نہ کہنے کا سب کہہ گیا دیوانہ
سمجھو تو مکمل ہے اب عشق کا افسانہ

دو زندگیوں کا ہے چھوٹا سا یہ افسانہ
لہرایا جہاں شعلہ اندھا ہوا پروانہ

ان رس بھری آنکھوں سے مستی جو ٹپکتی ہے
ہوتی ہے نظر ساقی دل بنتا ہے پروانہ

ویرانے میں دیوانہ گھر چھوڑ کے آیا تھا
جب ہو گا نہ دیوانہ گر ڈھونڈے گا ویرانہ

افسانہ غم دل کا سننے کے نہیں قابل
کہہ دیتے ہیں سب ہنس کر دیوانہ ہے دیوانہ

جب عشق کے ماروں کا پرساں ہی نہیں کوئی
پھر دونوں برابر ہیں بستی ہو کہ ویرانہ

یہ عشق محبت کی پانی سے نہیں بجھتی
پھر شمع سے جا لپٹا جلتا ہوا پروانہ

*****

Har Saans Hai Ek Nagma Har Nagma Hai Mastana
Kis Darja Dukhe Dil Ka Rangeen Hai Afsana

Jo Kuchh Tha Na Kahane Ka Sab Kah Gaya Deewana
Samjho To Mukmmal Hai Ab Ishq Ka Afsana

Do Zindagiyon Ka Hai Chota Sa Yeh Afsana
Lahraya Jahan Shola Andha Hua Parwana 

In Ras Bhari Aankhon Se Masti Jo Tapakti Hai 
Hoti Hai Nazar Saqi Dil Dhundhta Hai Parwana 

Veerane Mein Deewana Ghar Chhodkar Aaya Tha
Jab Hoga Na Deewana Ghar Dhundhega Veerana 

Afsana Gham Dil Ka Sunane K Nahin Kabil
Kah Dete Hain Sab Hans Kar Deewana Hai Deewana

Jab Ishq Ke Maron Ka Pursaa Hi Nahin Koi
Phir Donon Barabar Hain Basti Ho Ke Veerana

Yah Aag Mohabbat Ki Pani Se Nahin Bujhati
Phir Shamma Se Ja Lipta Jalta Hua Parwana

Thanks for Visiting 

Post a Comment

0 Comments