Jo Dil Saath Chhutne Se Ghabra Raha Hai ||| Ghazal

جو دل ساتھ چھٹنے سے گھبرا رہا ہے
وہ چھٹتا نہیں اور پاس آ رہا ہے

ہمیشہ کو پھلے پھولے گا یہ گلشن
ابھی دیکھنے کو تو مرجھا رہا ہے

ہر ایک شام کہتی ہے پھر صبح ہو گی
اندھیرے میں سورج نظر آرہا ہے

بڑی جا رہی ہے اگر دھوپ آگے
تو سایہ بھی دوڑا چلا جا رہا ہے

ستارے بنیں گے چمکدار آنسو
یہ رونا ہنسی کی خبر لا رہا ہے

اگر دکھ نہیں ہے نہیں پھر ہے سکھ بھی
زمانہ یہ پہچان بتلا رہا ہے

تھکنا آرزو کہتی ہے راستے کی
کہ آرام بھی ساتھ ساتھ آرہا ہے

***
Jo Dil Sath Chhutane Se Ghabra Raha Hai 
Woh Chhutata Nahin Aur Pass A Raha Hai 

Hamesha Ko Phule Phale Ga Yah Gulshan
Abhi Dekhne Ko To Murjha Raha Hai 

Har Ek Shaam Kehti Hai Phir Subah Hogi
Andhere Mein Suraj Nazar A Raha Hai 

Badi Ja Rahi Hai Agar Dhup Aage 
To Saya Bhi Dora Chala Ja Raha Hai

Sitare Banenge Chamakdar Aansu
Yah Rona Hansi Ki Khabar La Raha Hai 

Agar Dukh Nahin Hai Nahin Phir Hai Sukh Bhi 
Zamana Yeh Pehchan Batla Raha Hai 

Thakkan Arzoo Kahati Hai Raste Ki 
Ke Aaram Bhi Sath Sath A Raha Hai 

Thanks for Visiting 

Post a Comment

0 Comments