Mujhe Unse Mohabbat Ho Gai Hai ||| Ghazal

مجھے ان سے محبت ہو گئی ہے
میری بھی کوئی قیمت ہوگئی ہے

وہ جب سے ملتفت مجھ سے ہوئے ہیں
یہ دنیا خوبصورت ہوگئی ہے

چڑھایا جا رہا ہوں دار پر میں
بیاں مجھ سے حقیقت ہو گئی ہے

رواں دریا ہیں انسانی لہو کے
مگر پانی کی قلت ہوگئی ہے

مجھے بھی اک ستم گر کے کرم سے
ستم سہنے کی عادت ہوگئی ہے

حقیقت یہ ہے ہم کیا اٹھ گئے ہیں
وفا دنیا سے رخصت ہو گئی ہے

غمِ جاناں میں جب سے مبتلا ہوں
غمِ دوراں سے فرصت ہو گئی ہے

اب ان کی کفر سامانی بھی آتش
دل و جاں پر عبارت ہو گئی ہے

*****

Mujhe Unse Mohabbat Ho Gai Hai
Meri Bhi Koi kimat ho gai hai

Vah Jab se mulfat mujhse hue hain
Yah Duniya khubsurat ho gai hai

Chadhaya ja raha hun Dar Per Main 
Bayan Mujhse Hakikat Ho Gai Hai 

Ravan Dariya Hain Insani Lahu Ke
Magar Pani Ki Killat Ho Gai Hai 

Mujhe Bhi Ek Sitamgar Ke Karam Se 
Sitam Sahne Ki Aadat Ho Gai Hai

Hakikat Yah Hai Ham Kya Uth Gaye Hain
Wafa Duniya Se Rukhsat Ho Gai Hai

Gham-e-Janan Main Jab Se Mubtala Hua Hun 
Gham-e-Dauran Se Fursat Ho Gai Hai

Ab Unki kufar-Samani Bhi Aatish
Dil-o-Jaan Per Ibarat Ho Gai Hai

Thanks for Visiting 

Post a Comment

0 Comments