Pani Mein Aag Dhyan Se Tere Bhadak Gai ||| Ghazal

پانی میں آگ دھیان سے تیرے بڑھ گئی 
آنسو میں کنوں تی ہوئی بجلی جھلک گئی

کب تک یہ جھوٹی اس کے اب آئے وہ اب آئے
پلکیں جھکیں پیوٹے تنے آنکھ تھک گئی

کھلنا کہیں چھپا بھی ہے چاہت کے پھول کا
لی گھر میں سانس اور گلی تک مہک گئی

آنسو رکے تھے آنکھ میں دھڑکن کا ہو برا
ایسی تکان دی کی پیالی چھلک گی

میری سنک بھی بڑھتی ہے ان کی ہنسی کے ساتھ
چٹکی کلی کہ پاؤں کی بیڑی کھڑک گئی

*****

Pani Mein Aag Dhyan Se Tere Bhadak Gai 
Aansu Mein Kanauti Hui Bijali Jhalak Gai 

Kab Tak Yah Jhuthi Aaj Ke Ab Aaye vah ab Aaye
Palake Jhuke Papote Tane Aankh Thak Gai 

Khelna Kahin Chhupa Bhi Hai Chahat Ke Phool ka
Leader Mein Saans Aur Gali Tak Mahak Gai 

Aansu Ruke The Aankh Mein Dhadkan Ka Ho Bura
Aisi Takan Di Ke Pyali Chalak Gai 

Meri Sanak Bhi Badhati Hai Unki Hansi Ke Sath
Chatki Kali Ke Paon Ki Bedi Khadak Gai

Thanks for Visiting 

Post a Comment

0 Comments