Woh Sar-e-Bam Kab Nahin Aata ||| Ghazal

وہ سر بام کب نہیں آتا
جب میں ہوتا ہوں تب نہیں آتا

بہر تسکیں وہ کب نہیں آتا
اعتبار آہ اب نہیں آتا

چپ ہے شکوؤں کی ایک بند کتاب
اس سے کہنے کا ڈھب نہیں آتا

ان کے آگے بھی دل کو چین نہیں
بے ادب کو ادب نہیں آتا

زخم سے کم نہیں ہے اس کی ہنسی
جس کو رونا بھی اب نہیں آتا

منہ کو آ جاتا ہے جگر غم سے
کیا اور گلہ تا بہ لب نہیں آتا

بھولی باتوں پہ تیری دل کو یقیں
پہلے آتا تھا اب نہیں آتا

دکھ وہ دیتا ہے اس پہ ہے یہ حال
لینے جاتا ہوں جب نہیں آتا

آرزو بھی بے اثر محبت چھوڑ
 کیوں کرے کام جب نہیں آتا

*****

Woh Sar-e-Bam Kab Nahin Aata
Jab Main Hota Hun Tab Nahin Aata

Behar-e-Taskin Woh Kab Nahin Aata
Aitbaar Aah Ab Nahi Aata

Chup Hai Shikvon Ki Ek Band Kitab
Usse Kehne Ka Dhab Nahi Aata

Unke Aage Bhi Dil Ko Chain Nahin
Be-adab Ko adab Nahin Aata

Zakhm Se Kam Nahi Hai Uski Hansi
Jisko Rona Bhi Ab Nahin Aata

Munh Ko Aa Jata Hai Jigar Gham Se 
Aur Gila Ta-Ba Lab Nahi Aata 

Bholi Baton Per Teri Dil Ko Yakin 
Pehle Aata Tha Ab Nahi Aata

Dukh Woh Deta Hai Is Pe Hai Yah Hal
Lene Jata Hun Jab Nahin Aata

Arzoo Be-Asar Mohabbat Chhod
Kyon Kare Kaam Jab Nahin Aata 

Thanks for Visiting

Post a Comment

0 Comments